قسمت جب فیصلا کرے کس سے کوھی گلا کرےپہلے زخم بھرے نہیں ٹھہر کے اب دیا کرے
ذخمی جگر صیح مگر مایوس نہ کیا کرے
حساس دل اپنے کبھی دل کی نہیں سنا کرے
ھنسے میرے جو حال پہ عاشق اسے خدا کرے